بریکنگ نیوز: نیا پاکستان بن گیا ، 400 ارب روپے کی قومی خزانے میں واپسی ۔۔۔۔ کپتان کے دبنگ ٹائیگر عبدالعلیم خان نے پاکستانیوں کو زبردست خوشخبری سنا دی

لاہور(نیوز ڈیسک)سینئر وزیر پنجاب عبدالعلیم خان نے کہا ہے کہ وزیر اعظم عمران خان حقیقی معنوں میں ملک گیر تبدیلی کی طرف گامزن ہیں اُن کے انقلابی اور دور رس نتائج کے حامل اقدامات سے نئے پاکستان کی تعمیر ہونے جا رہی ہے اور گزشتہ2برسوں میں اڑھائی ہزار روپے کی بچت اُن کی حکمت عملی،

سیاسی بصیرت اور قابلیت ثابت کرنے کے لئے کافی ہے اپنے ٹوئٹ میں سینئر وزیر پنجاب عبدالعلیم خان کا کہنا تھا کہ موجودہ حکومت نے ریکوڈک،کار کے اور جی آئی ڈی سی کے بڑے منصوبوں میں بھاری بچت کی ہے جبکہ آئی پی پی اور نجی کمپنیوں سے کم قیمت کے نئے معاہدے بھی عمران خان کے اصل ویژن کا عکاس ہیں جو قومی خزانے کی ایک ایک پائی سوچ سمجھ کر خرچ کر رہے ہیں عبدالعلیم خان نے کہا کہ گیس سرچارج کیس میں کامیابی سے نجی کمپنیوں سے 400ارب روپے کی وصولی ہو گی۔انہوں نے کہا کہ قومی ترسیلات زر میں اضافہ خوش آئند ہے جس سے ملکی معیشت مستحکم ہو گی سینئر وزیر عبدالعلیم خان نے کہا کہ کورونا بحران کے باوجود سٹاک مارکیٹ میں تیزی اور تین مہینوں میں 13ہزار پوائنٹس کا اضافہ موجودہ حکومت کی کامیابی ظاہر کرتا ہے اسی طرح بین الاقوامی ریٹنگ ایجنسی موڈیز کی طرف سے پاکستان کو معاشی طور پر مستحکم قرار دیا جانا بڑا بریک تھرو ہے انہوں نے کہا کہ دیوالیہ ہونے کے نزدیک ملکی معیشت کو نئے سرے سے استوارکرنا عمران خان اور اُن کی ٹیم کا کریڈٹ ہے۔دوسری جانب ایک اور خبر کے مطابق اسلام آباد ہائی کورٹ نے نواز شریف کی بذریعہ نمائندہ احتساب عدالت پیشی کے کیس کی سماعت کا تحریری حکم نامہ جاری کر دیا ہے جس میں کہاگیاہے کہ ضمانت میں توسیع نہ ہونے کی صورت میں نواز شریف کو عدالت میں پیش ہونا پڑے گا،درخواست گزار کےوکیل درخواست قابل سماعت ہونے پر عدالت کو مطمئن نہ کر سکے۔ پیر کو چیف جسٹس اطہرمن اللہ اور جسٹس عامر فاروق نے تین صفحات پرمشتمل تحریری حکم نامہ جاری کیا۔ تحریری حکم نامے میں کہاگیاکہ درخواست گزار کے وکیل درخواست قابل سماعت ہونے پر عدالت کو مطمئن نہ کر سکے۔تحریری حکم نامہ کے مطابق وکیل درخواست گزار کی استدعا پر انہیں وقت دے رہے ہیں، آئندہ سماعت پر عدالت کو مطمئن کریں، پنجاب حکومت کی فراہم کردہ میڈیکل رپورٹ کے پیش نظر نواز شریف کو مخصوص وقت کیلئے ضمانت دی تھی۔حکم نامہ کے مطابق پنجاب حکومت نواز شریف کی صحت کی صورتحال کو مدنظر رکھتے ہوئے ضمانت میں توسیع کرنے کا اختیار رکھتی تھی، حکم نامہ کے مطابق اسلام آباد ہائی کورٹ نے میاں نواز شریف کا نام ایگزیٹ کنٹرول لسٹ سے نہیں نکالا۔تحریری حکم نامہ کے مطابق بتایا گیا کہ نواز شریف کا نام وفاقی کابینہ کے فیصلے پر ای سی ایل سے نکالا گیا، وفاقی حکومت اور نیب میں سے کسی ایک نے بھی نواز شریف کا نام ای سی ایل سے نکالنے کے بارے میں عدالت کو آگاہ نہیں کیا، حکومت پنجاب نے اگر نواز شریف کی ضمانت میں توسیع نہیں کی تو انہیں اس عدالت کے سامنے سرینڈر کرنا پڑیگا۔

Sharing is caring!

Comments are closed.