روسی صحافی نے تہلکہ خیز انکشاف کر ڈالا

ماسکو (نیوز ڈیسک) روسی صحافی نے تہلکہ خیز انکشاف کر ڈالا۔ روسی صحافی میخائل بورس نے متحدہ عرب امارات کی جانب سے اسرائیل کو تسلیم کرنے کے فیصلے پر کڑی تنقید کرتے ہوئے کہا کہ متحدہ عرب امارات آگ سے کھیل رہا ہے۔ اس نے خود کو پلیٹ میں سجا کر

مشرق وسطیٰ میں بڑی مصیبتوں کو دعوت دی ہے۔ جب انہیں اس چیز کا ادراک ہوگا اور کسی کے اعتراض کرنے پر عرب امارات رو کر خود کو مصیبت سے نکلنے کی التجا کرے گا جواس نے اس فیصلے سے اپنے گھر لائی ہیں۔ دوسری جانب اسرائیلی وزیراعظم نیتن یاہو نے متحدہ عرب امارات سے باہمی تعلقات کا معاہدہ طے پانے کے باوجود مغربی کنارے کو اسرائیل میں شامل کرنے کا منصوبہ ختم نہ کرنے کا اعلان کیا ہے۔ عرب میڈیا کے مطابق اسرائیلی وزیراعظم نیتن یاہو نے متحدہ عرب امارات سے معاہدے کے ایک روز بعد ہی اپنے بیان میں مغربی کنارے کو اسرائیل میں ضم کرنے سے متعلق اہم بیان دیا۔ انہوں نے کہا کہ متحدہ عرب امارات سے باہمی تعلقات کے معاہدے کے تحت وہ مغربی کنارے کو اسرائیل میں ضم کرنے کے منصوبے میں تاخیر پر رضا مند ہیں لیکن یہ منصوبہ اب بھی ان کی ٹیبل پر موجود ہے۔ اسرائیلی وزیراعظم نے ٹی وی پر خطاب میں کہا کہ انہوں نے صرف اس منصوبے میں تاخیر پر رضا مندی ظاہر کی تھی لیکن وہ اپنے حقوق اور اپنے زمین کے لیے کبھی پیچھے نہیں ہٹیں گے۔ نیتن یاہو کا کہنا تھا کہ اسرائیل کی خودمختاری کو بڑھانے کے منصوبے میں کوئی تبدیلی نہیں ہوئی، مغربی کنارے کے علاقوں میں امریکا کے ساتھ مکمل ہم آہنگی کے ساتھ ہماری خودمختاری ہے۔ دوسری جانب متحدہ عرب امارات کے ڈپٹی سپریم کمانڈر شہزادہ محمد بن زاید النہیان کی جانب سے ٹوئٹر پر بیان جاری کیا گیا ہے جس میں ان کا کہنا تھا کہ یو اے ای نے اسرائیل کے مغربی کنارے کے علاقوں کو ضم کرنے کے منصوبے کا جائزہ لیا۔ انہوں نے کہا کہ فلسطینی علاقوں کو مزید اسرائیل میں ضم کرنے سے روکنے کے لیے ایک معاہدہ کیا گیا۔ عرب میڈیا کے مطابق متحدہ عرب امارات کے وزیر خارجہ نے میڈیا بریفنگ میں کہا کہ زیادہ تر ممالک اسے دو ریاستوں کے درمیان محفوظ حل کے لیے اہم قدم کے طور دیکھیں گے۔

Sharing is caring!

Comments are closed.