اسے کہتے ہیں ٹیم ورک ۔۔۔!!! انتہائی مشکل گھڑی میں بھی عاصم سلیم باجوہ سرخرو ، پاکستانیوں کو اب تک کی شاندار خوشخبری سنا دی

اسلام آباد(ویب ڈیسک)چیئرمین سی پیک اتھارٹی عاصم سلیم باجوہ نے کہاہے کہ تھرانرجی لمٹیڈحبکو کے تھربلاک ٹو پاور پلانٹ پر کام کورونا سے متاثر نہیں ہوا۔چیئرمین سی پیک اتھارٹی عاصم سلیم باجوہ نے سماجی را بطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر اپنے ٹوئٹ میں کہا ہے کہ تھرانرجی لمٹیڈحبکو کے تھربلاک ٹو 330 میگاواٹ پاور پلانٹ پر کام

جاری ہے ،تھربلاک ٹو پاور پلانٹ پر کام کورونا سے متاثر نہیں ہوا۔انہوں نے کہا کہ 500 ملین ڈالر کی سرمایہ کاری سے منصوبے میں بہترین پیشرفت ہورہی ہے ،منصوبے سے مقامی افراد کیلئے 805 ملازمتیں میسر ہیں ۔ جبکہ دوسری جانب ایک خبر کے مطابق وائس چانسلریونیورسٹی آف ہیلتھ سائنسز پنجاب ڈاکٹر جاوید اکرم نے کہا ہے کہ پاکستان میں کورونا ویکسین آزمائش کی تیاری شروع کردی ہے، ویکسین کی آزمائش کیلئے رضاکاروں کے ناموں کا اندراج کیا جا رہا ہے، آزمائش کیلئے20 ہزار افراد کے ناموں کا اندراج کیا جائے گا۔ انہوں نے آج یہاں گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان میں کورونا ویکسین کی آزمائش کیلئے رضاکاروں کے ناموں کے اندارج کا آغاز کردیا گیا ہے۔آزمائش کیلئے 20 ہزار افراد کے ناموں کا بطور رضاکار اندراج کیا جائےگا۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان میں جس ویکسین کی آزمائش کی جارہی ہے یہ آکسفورڈ یونیورسٹی کی ویکسین ہے، پاکستان آکسفورڈ یونیورسٹی کے اشتراک سے ویکسین کی آزمائش کا کام کرے گا۔ڈاکٹر جاوید اکرم نے کہا کہ پاکستان میں کورونا ویکسین کی آزمائش کیلئے2 ماہ لگ سکتے ہیں۔ اس مقصد کیلئے برطانیہ سے بھیجی گئی ویکسین کی تصدیق کیلئے حکومت پاکستان سے اجازت لی جائے گی۔دوسری جانب امریکی دوا ساز کمپنی نے کہا ہے کہ کورونا ویکسین کا بندروں پر کامیاب تجربات کرنے کے بعد اب انسانوں پر اس ویکسین کے ٹرائلز کا آغاز کر دیا گیا ہے۔امریکی ذرائع ابلاغ کے مطابق امریکی دوا ساز کمپنی کا کہنا ہے کہ دنیا بھر میں پھیلے ہوئے کورونا وائرس پر قابو پانے کے لئے تیار کردہ ویکسین کو بندروں پر تجربات کے بعد امریکا اور بیلجیم میں 1000 انسانوں پر ٹرائلز کا آغاز کر دیا گیا ہے۔ کمپنی ترجمان کا کہنا ہے کہ اس ویکسین کی تیاری پر 456 ملین ڈالر لاگت آئی ہے۔ امریکہ میں بھی کورونا وائرس کی دو ممکنہ ویکسینز کی وسیع پیمانے پر حتمی آزمائش کا آغاز کر دیا گیا ہے تاکہ ان کے محفوظ اور موثر ہونے کا یقین کیا جا سکے۔

Sharing is caring!

Comments are closed.