انچ بھی پیچھے نہیں ہٹیں گے ۔۔

ماسکو(ویب ڈیسک ) چین کے وزیر دفاع ویء فینگی نے بھارتی ہم منصب راج ناتھ سنگھ سے دوٹوک انداز میں کہا ہے کہ سرحد پر جاری حالات اور تناؤ کی وجہ اور حقیقت بہت واضح ہے اور اس کی تمام تر ذمہ داری انڈیا پر عائد ہوتی ہے۔دوسری جانب انڈین آرمی کے چیف

جنرل منوج مکنڈ ناروان نے اعتراف کیا ہے کہ لائن آف ایکچول کنٹرول (ایل اے سی) پر صورتحال واقعتاً نازک اور کشیدہ ہے۔ماسکو میں دو گھنٹے سے طویل ملاقات کے بعد چینی حکومت کی جانب سے جاری سرکاری بیان کے مطابق چین کے وزیر دفاع ویء فینگی نے کہا کہ دونوں مالکوں کے درمیان واضح طور پر بات چیت ہونی چاہیے تاکہ اس تناؤ کی کیفیت کو کم کیا جائے تاہم ان کا کہنا تھا کہ چین کسی بھی صورت میں اپنی ایک انچ جگہ بھی نہیں چھوڑ سکتا۔چینی فوج پوری طرح تیار ہے اور انہیں اس بات کا اعتماد ہے کہ وہ اپنی قومی اور سرحدی سالمیت کا بھرپور طریقے سے دفاع کر سکتے ہیں۔ویء فینگی نے راج ناتھ سنگھ کو پیغام دیا کہ دونوں ملکوں کو ساتھ بیٹھ کر بات کرنا ہوگی تاکہ سرحدی علاقے میں امن قائم رہے۔ادھر لداخ دورہ کے دوران جنرل منوج مکنڈ ناروان نے کہا ہے کہ ‘ایل اے سی پر صورتحال کافی سنگین ہے لیکن ہم کسی بھی چیلنج سے نمٹنے کے لیے تیار ہیں۔انہوں نے مزید کہا کہ ملک فوج پر اعتماد کرسکتا ہے اور انڈین فوج نے احتیاطی طور پر ایل اے سی پر اضافی تعیناتیاں کی ہیں۔ایل اے سی پر پہلے سے موجود پوزیشن حاصل کرنے کے لیے فوجی اور سفارتی سطح پر مسلسل بات چیت جاری ہے۔ ہمیں یقین ہے کہ بات چیت کے ذریعے اس کا حل تلاش کیا جاسکتا ہے۔

Sharing is caring!

Comments are closed.