خان تیرا کوئی ثانی نہیں ۔۔۔!!! یوٹیلٹی اسٹورز حکومتی سرپرستی سے خسارے سے نکل کر بڑا ٹیکس ادا کرنے والا ادارہ بن گیا

اسلام آباد (نیوز ڈیسک) یوٹیلٹی اسٹورز 2 سال میں حکومتی سرپرستی سے خسارے سے نکل کر بڑا ٹیکس ادا کرنے والا ادارہ بن گیا ، جولائی2019سے مئی 2020تک ادارے نے 7.09 ارب روپے کا ٹیکس ادا کیا ۔ تفصیلات کے مطابق یوٹیلٹی اسٹورز کارپوریشن آف پاکستان کی 2سالہ کارکردگی جاری کردی گئی، یوٹیلٹی اسٹورز حکومتی سرپرستی سے خسارے

سے نکل کر بڑا ٹیکس ادا کرنے والا ادارہ بن گیا.سال18-2017میں ادارے کی 5.46 ارب کی انونٹری تھی جبکہ مئی2020 تک یوٹیلٹی اسٹورز کی انونٹری 15 ارب روپے تک پہنچ گئی ، سال2017-18میں ادارے کو 6.64 ارب کے خسارے کا سامنا تھا، سال2018-19میں ادارے کے ذمے وینڈرز کے10.28 ارب تھے جبکہ جون2020تک ادارے کے ذمے وینڈرز کے3.49 ارب روپے واجب الادا ہیں.وزیراعظم نے 8 جنوری2020 کو پرائم منسٹرز ریلیف پیکج کا اجرا کیا ، پیکج کے تحت ادارے کو اشیائے خورونوش خریداری کے لیے5ارب کی سبسڈی دی گئی ، ریلیف پیکج کا مقصد عوام الناس کوریلیف فراہم کرنا تھا۔پرائم منسٹرریلیف پیکج کے پہلے فیز میں17اپریل تک 5بنیادی اشیا پر سبسڈی دی گئی، رمضان میں ریلیف پیکج 5بنیادی اشیائے ضروریہ سے بڑھا کر19 تک کر دیا گیا اور کو رونا کے دوران عوام کو رمضان ریلیف پیکج کے تحت سبسڈی دی گئی ۔ گزشتہ 6ماہ میں ادارے نے29.8 ملین گھرانوں کو اشیائے ضروریہ کی فراہمی یقینی بنائی ، مالی سال 19-2018میں یوٹیلٹی اسٹورز کی کل سیل9 ارب روپے تھی جبکہ مالی سال2019-20میں ادارے نے 50.83 ارب روپے کی سیل کی اور جولائی2019سے مئی 2020تک ادارے نے 7.09 ارب روپے کا ٹیکس ادا کیا۔

Sharing is caring!

Comments are closed.