بریکنگ نیوز: 1 کروڑ نوکریوں کا وعدہ وفا، حکومت پاکستان نے تمام بے روزگار نوجوانوں کو بڑی خوشخبری سنا دی

کراچی(نیوز ڈیسک) وفاقی وزیر برائے منصوبہ بندی اسد عمر کا کہنا ہے کہ ملک میں کروڑوں لوگ ایسے ہیں جن کے پاس اپنی چھت نہیں ہے، تعمیراتی صنعت کھلنے سے روزگار کے مواقع پیدا ہوں گے۔اے آر وائی یوز کی رپورٹ کے مطابق وفاقی وزیر اسد عمر نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ملک میں

تعمیراتی شعبے کو بہت اہمیت دی جارہی ہے، وزیراعظم خود تعمیراتی شعبے کی اسکیم کو دیکھ رہے ہیں، جو معاملات پہلے ہوجانے چاہئے تھے وہ اب ہورہے ہیں۔اسد عمر نے کہا کہ ہر شخص کا حق ہے کہ اس کا اپنا گھر ہو، پاکستان میں ایک کروڑ گھروں کی کمی کا سامنا ہے، تعمیراتی شعبہ وہ ہے جہاں سب سے زیادہ روزگار پیدا کیا جاسکتا ہے۔وفاقی وزیر نے کہا کہ امید ہے آباد اس سلسلے میں اپنے ممبر اور دوسروں کو بھی آمادہ کرے گی، جولائی میں سیمنٹ کے ڈیٹا سے پتا چلتا ہے کہ کام شروع ہوگیا ہے۔کرونا وبا کے حوالے سے انہوں نے کہا کہ سب سے زیادہ ایس او پیز کا خیال اسپتالوں اور مساجد میں رکھا گیا ہے۔انہوں نے کہا کہ پاکستان کے بڑے فلاحی ادارے کراچی سے شروع ہوئے، کراچی کے اندر فلاحی کام جتنا میمن کمیونٹی کرتی ہے شاید ہی کوئی اور کرتا ہو۔ایک سوال کے جواب میں وفاقی وزیر نے کہا کہ آج بھی وزیر اعلیٰ سندھ سے میٹنگ ہوئی ہے، پیر سے شہر کے تین بڑے نالوں پر کام ترجیحی بنیادوں پر شروع ہوگا۔ جبکہ دوسری جانب ایک خبر کے مطابق وزیراعظم کے معاون خصوصی نے پنشنرز کو خوشخبری سنا دی، زلفی بخاری کا کہنا ہے

کہ پنشنرز کو پنشن میں تقریباً 100 فیصد اضافے کی خوشخبری سنا دی گئی، ای او بی آئی پنشن ساڑھے 8 ہزار روپے تک لے کر آئے ہیں، انشاء اللہ کم از کم پنشن 15 ہزار روپے کریں گے۔ تفصیلات کے مطابق وزیراعظم عمران خان کے معاون خصوصی برائے اوورسیز پاکستانیز زلفی بخاری کی جانب سے بزرگ پنشنرز کو بڑی خوشخبری سنائی گئی ہے۔ایک نجی ٹی وی چینل کے پروگرام سے گفتگو کرتے ہوئے زلفی بخاری کا کہنا تھا کہ موجودہ حکومت انشاء اللہ بزرگ پنشنرز کی کم از کم پنشن 15 روپے تک لے جائے گی۔ موجودہ حکومت کےدور میں کم از کم پنشن کو ساڑھے 8 ہزار روپے کیا گیا گیا، جس میں مزید اضافہ کیا جائے گا۔زلفی بخاری کی جانب سے محنت کش طبقے کو بھی خوشخبری سنائی گئی ہے۔ معاون خصوصی کی جانب سے اعلان کیا گیا ہے کہ ای او بی آئی پنشن کی ادائیگی کا نظام مزید بہتر کر لیا گیا ہے۔ان کا کہنا ہے کہ اب سے بزرگ پنشنرز کو ان کے گھر پر ہی پنشن پہنچائی جائے گی۔ ایک نظام بنایا ہے جس کے تحت آئندہ سے ای او بی آئی پنشن براہ راست پنشنر کے نجی بینک اکاونٹ میں منتقل ہو جائے گی، یوں پنشنرز کو بینکوں کے باہر قطاروں میں کھڑے ہونے کی ضرورت نہیں ہوگی۔ زلفی بخاری کی جانب سے مزید کہا گیا ہے کہ ادارے کو منافع بخش بنانے کی کوشش کر رہے ہیں۔

Sharing is caring!

Comments are closed.